سورة الانعام - آیت 44

فَلَمَّا نَسُوا مَا ذُكِّرُوا بِهِ فَتَحْنَا عَلَيْهِمْ أَبْوَابَ كُلِّ شَيْءٍ حَتَّىٰ إِذَا فَرِحُوا بِمَا أُوتُوا أَخَذْنَاهُم بَغْتَةً فَإِذَا هُم مُّبْلِسُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

پھر انہیں جو نصیحت کی گئی تھی، جب وہ اسے بھلا بیٹھے تو ہم نے ان پر ہر نعمت کے دروازے کھول دیئے (١٥) یہاں تک کہ جو نعمتیں انہیں دی گئی تھیں، جب وہ ان پر اترانے لگے تو ہم نے اچانک ان کو آپکڑا، جس کا نتیجہ یہ ہوا کہ وہ بالکل مایوس ہو کر رہ گئے۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(45) ان قوموں نے جب تکلیف ومصیبت والی آزمائشوں سے عبرت حاصل نہیں کی، تو پھر اللہ تعالیٰ نے دنیاوی نعمتوں سے انہیں مالا مال کردیا، اور یہ سب کچھ اللہ کی طرف سے ڈھیل اور ایک خطر ناک آزمائش تھی، یہاں تک کہ جب وہ اپنے شرکیہ اعمال کے ساتھ ان نعمتوں میں ڈوب گئے اور خوشی میں مگن ہوگئے، توا للہ تعالیٰ نے انہیں اچانک پکڑ لی ا، اور ان کا وجود ہی ختم کردیا۔ اور جو کچھ ان کے ساتھ ہوا اس پر اللہ کا شکرہی ادا کرنا چاہیئے، کیونکہ کافروں اور اللہ کے سر کش بندوں کے فاسد عقائد واعمال سے اہل زمین کا نجات پانا ایک بڑی نعمت ہے۔ امام احمد نے عقبہ بن عامر (رض) سے نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی یہ حدیث روایت کی ہے کہ جب تم دیکھو کہ اللہ تعالیٰ اپنے کسی بندہ کو اس کے گناہوں کے باجود اس کی خواہش کے مطابق دنیاسی نعمتیں دے رہا ہے تو سمجھ لو کہ اس کی رسی ڈھیل دی گئی ہے، پھر آپ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے یہی آیت پڑھی۔