سورة الانعام - آیت 2

هُوَ الَّذِي خَلَقَكُم مِّن طِينٍ ثُمَّ قَضَىٰ أَجَلًا ۖ وَأَجَلٌ مُّسَمًّى عِندَهُ ۖ ثُمَّ أَنتُمْ تَمْتَرُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

وہی ذات ہے جس نے تم کو گیلی مٹی سے پیدا کیا، پھر (تمہاری زندگی کی) ایک میعاد مقرر کردی، اور (دوبارہ زندہ ہونے کی) ایک متعین میعاد اسی کے پاس ہے (١) پھر بھی تم شک میں پڑے ہوئے ہو۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(3) شرک باللہ کا بطلان کرنے کے بعد بعث بعد الموت کا انکار کی تردید کی جارہی ہے، اگرچہ آسمان وزمین کی تخلیق پر قادرہونا بعث بعد الموت پر قادر ہونے کی بڑی دلیل ہے لیکن چونکہ نزاع انسان کا دوبارہ زندہ کیا جانا ہے، اسی لیے ان کی ابتدائی تخلیق سے استدلال کرنا زیادہ مباسب ہے رہا، اور یہاں بنی نوع انسان کی تخلیق مٹی سے بتائی گئی ہے، اس اتعبار سے کہ تمام انسان حضرت آدم کی اولاد ہیں اور آدم مٹی سے پیدا کیے گئے تھے، تو گویا ہر انسان کی تخلیق میں آدم کی تخلیق کا جز وموجود ہے، یا اس اعتبار سے کہ وہ نطفہ جس سے انسان وجود میں آتا ہے وہ مٹی سے بنا ہوا ہوتا ہے۔ آیت میں پہلے' اجل "سے مراد موت، اور دوسرے "اجل"سے مراد روزے قیامت ہے اور "عندہ "سے مراد یہ ہے کہ روز قیامت کا علم صرف اللہ کو ہی ہے۔ (4 یعنی اپنی ابتدائے تخلیق اور انتہائے تخلیق کا مشاہدہ کرنے کے باجود، بعث بعد الموت کے عقیدہ میں کیسے شبہ کرتے ہو۔