سورة المآئدہ - آیت 117

مَا قُلْتُ لَهُمْ إِلَّا مَا أَمَرْتَنِي بِهِ أَنِ اعْبُدُوا اللَّهَ رَبِّي وَرَبَّكُمْ ۚ وَكُنتُ عَلَيْهِمْ شَهِيدًا مَّا دُمْتُ فِيهِمْ ۖ فَلَمَّا تَوَفَّيْتَنِي كُنتَ أَنتَ الرَّقِيبَ عَلَيْهِمْ ۚ وَأَنتَ عَلَىٰ كُلِّ شَيْءٍ شَهِيدٌ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

میں نے ان لوگوں سے اس کے س وا کوئی بات نہیں کہی جس کا آپ نے مجھے حکم دیا تھا، اور وہ یہ کہ : اللہ کی عبادت کرو جو میرا بھی پروردگار ہے اور تمہارا بھی پروردگار۔ اور جب تک میں ان کے درمیان موجود رہا، میں ان کے حالات سے واقف رہا۔ پھر جب آپ نے مجھے اٹھا لیا تو آپ خود ان کے نگراں تھے، اور آپ ہر چیز کے گواہ ہیں۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(143) ”قرآن کریم"وفاہ"کا لفظ تین معنوں میں استعمال ہوا ہے : موت کے معنی ہیں : جیسا کہ اللہ نے فرمایا (الزمر :42) نیند کے معنی ہیں : جیسا کہ اللہ نے فرمایا : ( الانعام :60) اور اٹھا لینے کے معنی ہیں جیسا کہ اس آیت کریمہ میں آیا ہے، اور آل عمران کر آیت (55) میں آیا ہے معلوم ہوا کہ یہاں وفاہ" بمعنی "رفع" کے ہیں یعنی "جب تو نے مجھے آسمان پر اٹھالیا "موت کے معنی میں نہیں ہے اسلیے کہ (جیسا کہ آل عمران میں بیان کیا جا چکا ہے) صحیح احادیث سے یہی ثابت ہے کہ عیسیٰ (علیہ السلام) کو موت لاحق نہیں ہوئی، بلکہ وہ آسمان پر اسی حال میں موجود ہیں جس حال میں دنیا میں تھے، یہاں تک کہ آخری زمانے میں دوبارہ زمین پر اتریں گے، اس آیت سے یہ بھی معلوم ہوا کہ انبیاء کرام جب اپنی دنیاوی عمر پوری کر کے عالم بززخ کی طرف منتقل ہوجاتے ہیں۔ تو انہیں اپنی امتوں کی احوال واعمال کا پتہ نہیں ہوتا۔ امام بخاری نے اپنی کتاب "الصحیح" کے کئی ابواب میں ابن عباس (رض) سے روایت کی ہے کہ نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے خطبہ کیا اور فرمایا کہ قیامت کے دن میری امت کے کچھ لوگ لائے جائیں گے، جنہیں بائیں طرف لے جا یائے گا، تو میں کہوں گا : اے رب یہ لوگ تو میرے ساتھی ہیں، تو آپ سے کہا جائے گا۔ آپ نہیں جانتے کہ انہوں نے آپ کے بعد دین میں کیا کیا نئی باتیں پیدا کی تھیں تو میں اللہ کے نیک بندے (عیسی) کی طرح کہوں گا : تو ان پھر کہا جائے گا کہ یہ لوگ آپ کے دنیا سے رخصت ہوجانے کے بعد ہر لمحہ پیچھے ہوتے رہے۔