سورة المآئدہ - آیت 105

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا عَلَيْكُمْ أَنفُسَكُمْ ۖ لَا يَضُرُّكُم مَّن ضَلَّ إِذَا اهْتَدَيْتُمْ ۚ إِلَى اللَّهِ مَرْجِعُكُمْ جَمِيعًا فَيُنَبِّئُكُم بِمَا كُنتُمْ تَعْمَلُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

اے ایمان والو ! تم اپنی فکر کرو۔ اگر تم صحیح راستے پر ہوگے تو جو لوگ گمراہ ہیں وہ تمہیں کوئی نقصان نہیں پہنچا سکتے۔ (٧٢) اللہ ہی کی طرف تم سب کو لوٹ کر جانا ہے، اس وقت وہ تمہیں بتائے گا کہ تم کیا عمل کرتے رہے ہو۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(130) اندھی تقلید اومہلک بد عت کی خطر ناکیوں کو بیان کرنے بعد بھی دلا یا جاتاکہ آدمی اگر راہ ہدایت پر گامزن ہے اور امر بالمعروف اور نہی عنالمنکر کا فریضہ المقدوراداکررہا ہے، تو دوسرے کی گمراہی کا بال اس کے سر نہیں آئے گا اس لیے کہ روز قیامت کوئی کسی دوسرے کا بوجھ نہیں اٹھائے گا، اور ہر شخص کو اس کے اپنے کیے کا بدلہ ملے گا۔ دوسروں کا گناہ اس کے سر نہیں ڈالا جائے گ ا، اس آیت کریمہ میں اسی مفہوم کو واضح کیا گیا ہے، لیکن اس کا یہ ہرگز مفہوم نہیں ہے کہ مسلمان پر امر بالمعروف اور نہی عن المنکر واجب نہیں ہے۔ اصحاب سنن نے روایت کی ہے کہ ابو بکر (رض) نے حمد وثنا کے بعد کہا : اے لوگو ! تم یہ آیت پڑھتے ہو، اور اس کا غلط مفہوم سمجھتے ہو میں تو رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کو کہتے ہوئے سنا ہے کہ جب لوگ برائی کو دیکھیں گے اور اسے نہیں بد لیں گے تو قریب ہے کہ اللہ کا عذاب ان سب کو آدبو چے گا۔ ابو ثعلہ خشی کی ایک اور روایت سے (جسے ترمذی نے روایت کی ہے) ثابت ہوتا ہے کہ اس آیت سے مراد وہ مسلمان ہیں جو آخری زمانہ میں آئیں گے، کہ جب ہر شخص اپنی خواہش کا بندہ ہوگا، دنیا کو دین پر ترجیح دے گا اور ہر آدمی اپنی رائے پر خوش ہوگا، رسول اللہ صل اللہ علیہ وسلم نے اس زمانہ کے ملمانوں کو نصیحت کی ہے کہ جب ایسا زمانہ آجائے تو عوام الناس کو چھوڑکر اپنی فکر میں لگ جاؤ، اس آیت کی ابتداء میں ہے کہ ابو ثعلہ نے رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے اس حدیث کے بارے میں پوچھا تو آپ نے فرمایا کہ ہاں، بھلائی کا حکم دو اور برائی سے روکو، یہاں تک کہ وہ زمانہ آجائے جس کا ذکر اوپر آچکا ہے۔