سورة المآئدہ - آیت 27

۞ وَاتْلُ عَلَيْهِمْ نَبَأَ ابْنَيْ آدَمَ بِالْحَقِّ إِذْ قَرَّبَا قُرْبَانًا فَتُقُبِّلَ مِنْ أَحَدِهِمَا وَلَمْ يُتَقَبَّلْ مِنَ الْآخَرِ قَالَ لَأَقْتُلَنَّكَ ۖ قَالَ إِنَّمَا يَتَقَبَّلُ اللَّهُ مِنَ الْمُتَّقِينَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

اور (اے پیغمبر) ان کے سامنے آدم کے دو بیٹوں کا واقعہ ٹھیک ٹھیک پڑھ کر سناؤ۔ جب دونوں نے ایک ایک قربانی پیش کی تھی، اور ان میں سے ایک کی قربانی قبول ہوگئی، اور دوسرے کی قبول نہ ہوئی۔ (٢٢) اس (دوسرے نے پہلے سے) کہا کہ : میں تجھے قتل کر ڈالوں گا۔ پہلے نے کہا کہ اللہ تو ان لوگوں سے (قربانی) قبول کرتا ہے جو متقی ہوں۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

41۔۔ ذیل میں مذکورہ تین آیتوں میں اللہ تعالیٰ نے آدم کے بیٹے ہابیل و قابیل کا واقعہ بیان کر کے حسد و سرکشی کا انجام بیان کیا ہے اور یہود کو یہ بتانا چاہا ہے کہ اگر وہ بھی حسد و سرکشی پر مصر رہے تو ان کا انجام بھی دنیا و آخرت میں بہت برا ہوگا۔ علمائے تفسیر نے لکھا ہے کہ ہابیل بکریاں پالتا تھا، اور قابیل کھیتی کرتا تھا، ہابیل نے اللہ کی رضا کے لیے ایک تندرست اور موٹی بکری ذبح کی، اور قابیل نے گھٹیاں قسم کا اناج اللہ کی راہ میں نکالا، ہابیل کا صدقہ قبول ہوگیا، اور قابیل کی بدنیتی کی وجہ سے اس کا صدقہ قبول نہیں کیا گیا، جس کے نرتیجہ میں قابیل حسد کا شکار ہوگیا۔ بعض دوسرے مفسرین نے یہ لکھا ہے کہ نسل آدم کی افزائش کے لیے اللہ نے حضرت آدم کے دین میں یہ جائز قرار دیا تھا کہ حوا کے ایک حمل سے پیدا شدہ لڑکے اور لڑکی کی شادی ان کے دوسرے حمل کے لڑکے اور لڑکی سے ہو۔ ہابیل کے ساتھ جو لڑکی پیدا ہوئی وہ بدصورت تھی، اس لیے قابیل نے اپنی ہی بہن سے شادی کرنی چاہی، جھگڑا ختم کرنے کے لیے حضرت آدم (علیہ السلام) نے دونوں سے کہا کہ تم لوگ اللہ کی رضا کے لیے قربانی کرو، ہابیل کی قربانی قبول ہوگئی، اور قابیل کی رد کردی گئی، جس پر وہ حسد میں مبتلا ہوگیا، اور ہابیل سے کہا کہ میں تمہیں قتل کردوں گا، ہابیل نے کہا کہ اللہ اہل تقوی کی قربانی قبول کرت اہے، اگر تمہاری قربانی قبول نہیں ہوئی تو اپنے آپ کو کوسو میرا اس میں کوئی قصور نہیں، تو پھر مجھے کیوں قتل کرو گے؟ اگر تم بطور ظلم مجھے قتل کرنے کے لیے ہاتھ بڑھاؤ گے تو میں اپنے دفاع میں تمہیں قتل کرنے کے لیے ہاتھ نہیں بڑھاؤں گا۔ مجھے تو اللہ کا ڈر ہے جو سارے جہاں کا رب ہے۔ بخاری و مسلم نے ابوبکر (رض) سے روایت کی ہے کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے ف رمایا جب دو مسلمان اپنی اپنی تلوار لے کر ایک دوسرے کے مقابل آجائیں تو قاتل اور مقتول دونوں جہنم میں جائیں گے۔ لوگوں نے کہا اے اللہ کے رسول ! قاتل کے بارے میں بات سمجھ میں آتی ہے، لیکن مقتول کیوں جہنم میں جائے گا؟ آپ نے فرمایا کہ چونکہ وہ اپنے مقابل کے قتل کے لیے پوری طرح کوشاں تھا۔