سورة النسآء - آیت 174

يَا أَيُّهَا النَّاسُ قَدْ جَاءَكُم بُرْهَانٌ مِّن رَّبِّكُمْ وَأَنزَلْنَا إِلَيْكُمْ نُورًا مُّبِينًا

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

لوگو تمہاے پاس تمہارے پروردگار کی طرف سے برہان (یعنی دلیل و حجت) آگئی، اور ہم نے تمہاری طرف چمکتی ہوئی روشنی بھیج دی

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

160۔ کافروں کے تمام گروہوں کے عقائد کی تردید کرنے کے بعد اللہ تعالیٰ نے تمام بنی نوع انسان کو رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کی رسالت پر ایمان لانے کی دعوت دی، اور کہا کہ ان کی نبوت کی صداقت پر حجت تمام ہوچکی اور حق کو واضح کرنے والا نور (قرآن کریم) آچکا۔ اب جو لوگ اللہ پر ایمان لے آئیں گے اور اپنے تمام امور میں اسی پر بھروسہ کریں گے تو اللہ ان کے حال پر رحم کرے گا، انہیں جنت میں داخل کرے گا اور ان کے درجات بلند کرے گا اور صراط مستقیم کی طرف ان کی رہنمائی کرے گا۔ حافظ ابن کثیر لکھتے ہیں کہ مومنوں کی دنیا و آخرت میں یہ امتیازی شان ہوتی ہے کہ وہ دنیا میں عیقدہ و عمل میں راہ راست پر گامزن ہوتے ہیں، اور آخرت میں اللہ تعالیٰ انہیں اس راہ راست پر ڈالے گا جو جنت کی طرف جا رہی ہوگی۔