سورة النسآء - آیت 88

۞ فَمَا لَكُمْ فِي الْمُنَافِقِينَ فِئَتَيْنِ وَاللَّهُ أَرْكَسَهُم بِمَا كَسَبُوا ۚ أَتُرِيدُونَ أَن تَهْدُوا مَنْ أَضَلَّ اللَّهُ ۖ وَمَن يُضْلِلِ اللَّهُ فَلَن تَجِدَ لَهُ سَبِيلًا

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

(مسلمانو) تمہیں کیا ہوگیا ہے کہ تم منافقوں کے بارے میں دو فریق بن گئے ہو؟ حالانکہ اللہ نے ان بدعملیوں کی وجہ سے جو انہوں نے کمائی ہیں انہیں الٹآ دیا ہے (یعنی وہ راہ حق سے پھر چکے ہیں) کیا تم چاہتے ہو، ایسے لوگوں کو راہ دکھا دو جن پر خدا نے راہ گم کردی (یعنی جن پر خدا کے قانون سعادت و شقاوت کے بموجب ہدایت کی راہ بند ہوگئی ہے) اور (یاد رکھو) جس کسی پر اللہ راہ گم کردے (یعنی جس کسی پر اس کے قانون کا فیصلہ لگ جائے کہ اس کے لیے راہ پانا نہیں) تو پھر تم اس کے لیے کوئی راہ نہیں نکال سکتے

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

95۔ اکثر مفسرین کی رائے ہے کہ اس آیت میں منافقین سے مراد عبداللہ بن ابی بن سلول اور اس کے ساتھی ہیں، جو غزوہ احد کے موقع سے میدانِ جنگ کی طرف جاتے ہوئے راستہ سے رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کا ساتھ چھوڑ کر واپس آگئے تھے۔ بخاری مسلم، احمد اور ترمذی نے زید بن ثابت (رض) سے روایت کی ہے کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) جب غزوہ احد کے لیے نکلے، تو کچھ لوگ جو آپ کے ساتھ نکلے تھے، راستہ سے واپس ہوگئے، ان کے بارے میں صحابہ کرام کی دو رائے ہوگئی، کچھ لوگوں نے کہا نہیں وہ مسلمان ہیں، تو اللہ تعالیٰ نے یہ آیت نازل فرمائی اور ان منافقین کا نفاق ظاہر کیا، اور رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے بھی فرمایا کہ یہ طیبہ شہر ہے، زنگ اور گندگی کو اس طرح الگ کردیتا ہے جیسے لوہار کی بھاتی لوہے کا زنگ الگ کردیتی ہے اس آیت کے سبب نزول کے بارے میں مسند احمد میں عبدالرحمن بن عوف (رض) سے ایک دوسری روایت بھی مروی ہے کہ کچھ عرب رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے پاس مدینہ منورہ آئے، اور مسلمان ہوگئے، لیکن وہ مدینہ منورہ کے مشہور بخار میں مبتلا ہوگئے، تو اسلام سے برگشتہ ہو کر وہاں سے نکل پڑے، راستہ میں کچھ صحابہ کرام نے ان سے پوچھا کہ تم لوگ کیوں واپس جا رہے ہو؟ انہوں نے کہا کہ مدینہ کی بیماری سے ہم تنگ آگئے تھے، صحابہ نے کہا کیا رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) تمہارے لیے بہترین نمونہ نہیں تھے؟ پھر ان کے بارے میں صحابہ کا اختلاف ہوگیا، کسی نے کہا یہ لوگ منافق مدینہ، اور دیگر منافقین عرب سبھوں کے حالات کو پیش نظر رکھتے ہوئے، صحابہ کرام کے درمیان اختلاف ہوا ہو، اور اختلاف نے شدت پکڑ لیا ہو، تو یہ آیت نازل ہوئی