سورة ھود - آیت 96

وَلَقَدْ أَرْسَلْنَا مُوسَىٰ بِآيَاتِنَا وَسُلْطَانٍ مُّبِينٍ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

اور (یہ بھی ہوچکا ہے کہ) ہم نے موسیٰ کو اپنی نشانیوں اور واضح سند کے ساتھ بھیجا تھا۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(٨٠) اس آیت کریمہ سے آیت (٩٨) تک موسیٰ (علیہ السلام) اور فرعون کا واقعہ بہت ہی اختصار کے ساتھ بیان کیا گیا ہے، اور یہ ساتواں واقعہ ہے جو اس سورت میں انبیائے کرام اور ان کی قوموں کے واقعات کے ضمن میں بیان ہوا ہے۔ آیات اور (سلطان مبین) کے معنی کی تعیین میں مفسرین کے کئی اقوال آئے ہیں۔ ایک قول یہ ہے کہ آیات سے مراد وہ نو نشانیاں ہیں جو اللہ تعالیٰ نے موسیٰ (علیہ السلام) کو دی تھیں اور (سلطان مبین) سے مراد عصائے موسوی ہے، جو اگرچہ نو نشانیوں میں شامل ہے، لیکن چونکہ اس کی ایک خاص حیثیت تھی، اسی لیئے اس کا ذکر مستقل طور پر کیا گیا ہے، اور فرعون کے ساتھ صرف سرداران قوم کا ذکر اس لیے کیا گیا کہ عوام اپنے تمام امور میں انہی سرداروں کی پیروی کرتے تھے، اور سرداران اپنے کفر و عناد میں فرعون کی پیروی کرتے تھے، جس کا ہر معاملہ ضلالت و گمراہی لیے ہوئے تھا۔