سورة التوبہ - آیت 30

وَقَالَتِ الْيَهُودُ عُزَيْرٌ ابْنُ اللَّهِ وَقَالَتِ النَّصَارَى الْمَسِيحُ ابْنُ اللَّهِ ۖ ذَٰلِكَ قَوْلُهُم بِأَفْوَاهِهِمْ ۖ يُضَاهِئُونَ قَوْلَ الَّذِينَ كَفَرُوا مِن قَبْلُ ۚ قَاتَلَهُمُ اللَّهُ ۚ أَنَّىٰ يُؤْفَكُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

اور یہودیوں نے کہا عزیر اللہ کا بیٹا ہے اور عیسائیوں نے کہا مسیح اللہ کا بیٹا ہے، یہ ان کی باتیں ہیں محض ان کی زبان سے نکالی ہوئی (ورنہ سمجھ بوجھ کر کوئی ایسی بات نہیں کہہ سکتا) ان لوگوں نے بھی انہی کی سی بات کہی جو ان سے پہلے کفر کی راہ اختیار کرچکے ہیں، ان پر اللہ کی لعنت ! یہ کدھر کو بھٹکے جارہے ہیں۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(24) یہود ونصاری کے مشرکانہ عقائد بیان کیئے جارہے ہیں تاکہ مسلمان انہیں جان کر ان کے خلاف جنگ پر آمادہ ہوں جاہل اور غلو کرنے والے یہودیوں نے عزیر (علیہ السلام) کو اللہ کا بیٹا قراف دیا جب کا زمانہ عیسیٰ (علیہ السلام) سے تقریبا ساڑھے پانچ سو سال پہلے کا ہے کہا جاتا ہے کہ انہوں نے بکھر ہوئے تورات کو اکھٹا کیا اور عبرانی زبان میں لکھی ہوئی تمام اسرائیلی کتابوں کو جمع کر کے بنی اسرائیل کے لیے قانون کی ایک عظیم کتاب تیار کی جس سے متاثر ہو کر یہودیوں نے اللہ کا مجازی بیٹا کہنا شروع کردیا جو توحید باری تعالیٰ کی شان کے خلاف تھا۔ اور گمراہ نصار میں سے کسی نے عیسیٰ (علیہ السلام) کو اللہ کا بیٹا کسی نے ان کو بعینہ اللہ اور کسی نے انہیں تین میں سے ایک معبو قرار دیا اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم میں کئی مقامات پر ان کے عقائد تفصیل کے ساتھ بیان کئے ہیں اللہ تعالیٰ اس آیت میں کہا ہے کہ محض ان لوگوں کی اللہ کے بارے میں افترپردازی ہے یہ لوگ گذشتہ زمانہ کے کافروں کی طرح مشرکانہ باتیں کررہے ہیں اور جیسے وہ گمراہ ہوئے انہوں نے بھی گمراہی اختیار کرلیے ہے اللہ کی ان پر لعنت ہو کس طرح یہ لوگ حق سے روگردانی کر کے باطل کی طرف دوڑے جا رہے ہیں۔