سورة الانفال - آیت 45

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا إِذَا لَقِيتُمْ فِئَةً فَاثْبُتُوا وَاذْكُرُوا اللَّهَ كَثِيرًا لَّعَلَّكُمْ تُفْلِحُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

مسلمانو ! جب (حملہ آوروں کی) کسی جماعت سے تمہارا مقابلہ ہوجائے تو لڑائی میں ثابت قدم رہو اور زیادہ سے زیادہ اللہ کو یاد کرو تاکہ تم کامیاب ہو۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(39) مو قو محل کی مناسبت سے اللہ تعالیٰ نے مند رجہ ذیل تین آیتوں میں مسلمانوں کو چند اہم جنگی تعلیمات دی ہیں تاکہ کفارومشر کین سے جنگ میں انہیں فتح و کامرانی ملے : 1۔ جب میدان جنگ میں مسلمانوں کا کافروں سے آمنا سامنا ہوا تو صبر واستقامت سے کام لیں اور شمن کے سامنے چٹان کی طرح اڑجائیں اس لیے کہ بزدلی فرار اور دشمن کے سامنے جزع فزع شکست فاش کا سبب ہوتا ہے صحیحین میں عبد اللہ بن ابی اوفی سے مروی ہے کہ رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے ایک جنگ کے موقع سے مسلمانوں کو خطاب کر کے فرمایا اے لوگو دشمن تلواروں کے سا یہ میں ہے۔ 2۔ میدان جنگ اور حالات جنگ میں اللہ کو کثرت سے یاد کریں کبھی بھی اس کی یاد سے غافل نہ ہوں اس لیے کہ ذکر الہی کی برکت سے اللہ کی رحمت کا نزول ہوتا ہے مصیبتیں چھٹ جاتی ہیں اور فتح وکامرانی مسلمانوں کے قدم چومتی ہے سو رہ بقرہ میں طالوت جالوت کا واقعہ گذر چکا ہے جب طالوت مسلمانوں کے ساتھ جالوت کے خلاف میدان کارزار میں آئے تو سب نے مل کر اللہ سے دعا کی اے رہمارے رب ! ہمیں صبر عطا فرما، اور ثابت قدمی دے، اور قوم کفار کے خلاف ہماری نصرت فرم ( البقرہ"250) اور نبی کر یم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے معر کہ بدر سے پہلے اللہ کے سامنے اتنی منا جات اور اتنی دعائیں کیں کہ آپ کی چادر آپ کے کندھوں سے گر گر جاتی تھی، اور اللہ تعالیٰ نے سورۃ رعد آیتا (28) میں فرمایا ہے کہ اللہ کی یاد سے دلوں کو سکون ملتا ہے، اور مجاہد کو میدان جنگ میں سب سے زیادہ اطمینان قلب کی ضروت ہوتی ہے 3۔ ہر حال میں لشکر اسلام کے مد نظر اللہ اور اس کے رسول کی اطاعت ہو جس کا لازمی نتیجہ یہ ہوگا کہ مجاہدین اپنے قائد کی اطاعت کو ضرور سمجھیں گے۔ 4۔ لشکر اسلام میں پھوٹ نہ پڑنے پائے ورنہ مسلمان کی قوت بکھر جائے گی اور دشمن غالب آجائیں گے۔ 5۔ مسلما نوں کی جنگ صرف اللہ کی رضا کے لے ہوتی ہے اس لیے مجاہدین کے پیش نظر کوئی دنیاوی مقصد مثلا ریاکاری یا اظہار شجاعت وغیرہ نہ ہو ور نہ اللہ کی تائید حاصل نہیں ہو تگی جیسا کہ ابو جہل اور دیگر کفار قریش نے کیا کہ میدان بدر میں ان کے پہنچنے سے پہلے ابو سفیان کے قاصد نے آکر ان سے کہا کہ اب تم لوگ لوٹ جاؤ کیونکہ ہمارا قافلہ اب مسلمانوں کی زد سے باہر نکل گیا ہے تو انہوں نے انکار کردیا اور کہا کہ ہم ندر تک ضرور جائیں گے وہاں پراؤ ڈالیں گے خوب گوشت کھائیں گے اور شراب پئیں گے اور رقص وسرور کی محفلیں جمائیں گے تاکہ عرت کے لوگوں کو ہمارے شان وشوکت کو پتہ چلے اور ہمیشہ کے لیے ہمارا رعب ان کے دلوں پر بیٹھ جائے چنانچہ انہوں نے ایسا ہی کیا اور نتیجہ یہ نکلا کہ مسلمانوں اور فرشتوں کے ہاتھوں انہیں موت کا تلخ جام پینا پڑا اور ان کی ماؤں اور بہنوں نے ان پر نو حہ خانی کی آیت (47) میں ابوجہل اور اس کے ساتھیوں کی طرف اشارہ ہے۔