سورة الانفال - آیت 24

يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُوا اسْتَجِيبُوا لِلَّهِ وَلِلرَّسُولِ إِذَا دَعَاكُمْ لِمَا يُحْيِيكُمْ ۖ وَاعْلَمُوا أَنَّ اللَّهَ يَحُولُ بَيْنَ الْمَرْءِ وَقَلْبِهِ وَأَنَّهُ إِلَيْهِ تُحْشَرُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

مسلمانو اللہ اور اس کے رسول کی پکار کا جواب دو، جب وہ پکارتا ہے تاکہ تمہیں (روحانی موت کی حالت سے نکال کر) زندہ کردے اور جان لو کہ (بسا اوقات ایسا ہوتا ہے کہ) اللہ (اپنے ٹھہرائے ہوئے قوانین و اسباب کے ذریعہ) انسان اور اس کے کے دل کے درمیان حائل ہوجاتا ہے وار جان لو کہ (آخر کار) اسی کے حضور جمع کیے جاؤ گے۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(17) اللہ تعالیٰ نے اہل ایمان کو حکم دیا ہے کہ جب رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) تمہیں ایسی چیز کی طرف بلائیں جو تمہارے لیے زندگی کے مترادف ہو تو ان کی بات مان جاؤ کیونکہ ان کی اطاعت اللہ کی اطاعت ہے اور ان کی بات ماننے ہی میں ہر بھلائی ہے آیت میں سے کس چیز کی طرف اشارہ ہے جو مسلمانوں کو زندگی دیتی ہے ؟ اس بارے میں میں علماء کے کئی اقوال ہیں : کسی نے اس سے قرآن کریم مراد لیا ہے اس لیے کہ اسی جہاد کے ذریعہ اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کو ذلت کے بعد عزت دی اور ان دشمنوں سے نجات دلائی جنہوں نے مکہ میں ان کی زندگی اجیرن بنا رکھی تھی، جہاد فی سبیل اللہ ہر دور میں مسلمانوں کے لیے زندگی کے مترادف رہے گا، مسلمانوں نے جب بھی اس سے پہلو تہی کی ذلت ورسوائی ان کا نصیب بن گئی اور جب بھی انہوں نے جہاد کیا آواز پر لبیک کہا، فتح وکامرانی نے ان کے قدم چومے، جہاد ہی وہ عمل صالح ہے کہ اگر کوئی مسلمان شہید ہوجاتا ہے تو اسے ابدی زندگی مل جاتی ہے، جیسا کہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے : کہ درحقیت آخرت کی زندگی ہی دائمی زندگی ہے، معلوم ہوا کہ جہاد فی سبیل اللہ دنیاوی اور اخری ہر اعتبار سے مسلمانوں کے لیے زندگی کے مترادف ہے۔ (18) اللہ تعالیٰ نے انسان اور اس کے دل کے درمیان حائل ہوجاتا ہے، اس کے کئی معانی بیان کیے گئے ہیں : 1۔ ایک تو بہ کہ اللہ تعالیٰ انسان کے دل میں دل میں جس طرح چاہتا ہے تصرف کرتا ہے، اگر ہدایت دینا چاہتا ہے تو اس کے اور کفر کے درمیان حائل ہوجاتا ہے، اور اگر گمراہ کرنا چاہتا ہے تو اس کے اور ایمان کے درمیان حائل ہوجاتا ہے، اسی وجہ سے نبی کریم (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کثرت سے دعا کرتے تھے کہ اے لوگوں کے پھیر نے والے ! میرے دل کو اپنے دین پر قائم وثابت رکھ، صحابہ کرام نے پوچھا اے اللہ کے رسول ! ہم آپ پر دین اسلام پر ایمان لے آئے تو کیا آپ پھر بھی ہمارے بارے میں ڈرتے ہیں ؟ تو آپ نے فرمایا ہاں انسا نوں کے دل اللہ کی دو انگلیوں کے درمیان ہوتے ہیں وہ جیسے چاہتا ہے، انہیں الٹتا پھیر تا ہے۔ (مسلم، حاکم، مسند احمد ترمذی ) دوسرا معنی یہ ہے کہ آیت کے اس حصہ میں موت آنے سے پہلے طاعت وبندگی کی ترغیب دلائی گئی ہے، یعنی اللہ تعالیٰ جب اپنے بندہ کو موت دے دتیا ہے تو عمل صالح کا ہر دروازہ بند ہوجاتا ہے اس لیے زندگی کو غنیمت جانو اور اللہ اور رسول کی اطاعت میں اخلاص پیدا کرو۔ 3۔ تیسرا معنی یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ اپنے بندوں سے بہت ہی زیادہ قریب ہے، جیسا کہ اللہ نے سورۃ ق آیت (16) میں فرمایا ہے ہے کہ ہم انسان سے اس کی شہ رگ سے بھی زیادہ قریب ہیں، مطلب یہ ہے کہ اللہ تعالیٰ دلوں کو چھپی باتوں کو جانتا ہے اس لیے بندہ کو اپنے اللہ سے کبھی بھی غافل نہیں ہونا چایئے۔