سورة الاعراف - آیت 179

وَلَقَدْ ذَرَأْنَا لِجَهَنَّمَ كَثِيرًا مِّنَ الْجِنِّ وَالْإِنسِ ۖ لَهُمْ قُلُوبٌ لَّا يَفْقَهُونَ بِهَا وَلَهُمْ أَعْيُنٌ لَّا يُبْصِرُونَ بِهَا وَلَهُمْ آذَانٌ لَّا يَسْمَعُونَ بِهَا ۚ أُولَٰئِكَ كَالْأَنْعَامِ بَلْ هُمْ أَضَلُّ ۚ أُولَٰئِكَ هُمُ الْغَافِلُونَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

اور کتنے ہی جن اور انسان ہیں جنہیں ہم نے جہنم کے لیے پیدا کیا (یعنی بالآخر ان کا ٹھکانا جہنم ہونے والا ہے) ان کے پاس عقل ہے مگر اس سے سمجھ بوجھ کا کام نہیں لیتے۔ آنکھیں ہیں مگر ان سے دیکھنے کا کام نہیں لیتے، کان ہیں مگر ان سے سننے کا کام نہیں لیتے۔ وہ (عقل و حواس کا استعمال کھو کر) چارپایوں کی طرح ہوگئے۔ بلکہ ان سے بھی زیادہ کھوئے ہوئے۔ ایسے ہی لوگ ہیں جو یک قلم غفلت میں ڈوب گئے ہیں۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(109) ہدایت وگمراہی اور اللہ کی تو فیق وعدم تو فیق کو جو بات ابھی گذری ہے، اسی مناسبت سے اللہ تعالیٰ نے یہاں خبر دی ہے کہ اس نے جنوں اور انسانوں کو اس لیے پیدا کیا ہے کہ وہ اپنی عقل وبصیرت سے کامل لے کر اپنے معبود حقیقی کو پہچانیں اور اسی کی عبادت کریں اور اسی کے احکام اوامر کے مطابق زندگی گذاریں، بہت سے جنوں اور انسانوں کا حال یہ ہے کہ وہ اللہ کے دین کا انکار کرتے ہیں۔ اور ان کا حال ایسا ہوتا ہے، کہ ان کے دل ان کی آنکھیں اور ان کے کان بیکار ہوجاتے ہیں کوئی بھی خیر کی بات قبول کرنے کی صلاحیت باقی نہیں رہتی توحید باری تعالیٰ اور اطاعت وبندگی کے اللہ ہی کے لیے مختص ہونے کے سارے دلائل وبراہین اس کے سامنے پیش کردیئے جاتے ہیں، لیکن ان سے وہ مستفید نہیں ہوتا بلکہ اس کا کبر وغرور بڑھتا جاتا ہے، اس کی "حالت جانوروں سے بدتر ہوجاتی ہے، لیکن کار ومتکبر جن وانسان خیر وشر کے درمیان تمیز کی صلاحیت ہی کھودیتا ہے تو گو یا اس کی حالت ایسی ہوجاتی ہے، کہ جیسے اللہ نے اسے جہنم کے لیے پیدا کیا ہے، وہ جہنم کی راہ پر آگے بڑھتا جاتا ہے، یہاں تک کہ اس کی موت آجاتی ہے، اور جہنمی بن جاتا ہے، اور یہ بات اللہ کے علم ازلی میں ہے کہ کون حق کی دعوت کو قبول کرے گا اور کون انکار کردے گا، کسے خیر کی تو فیق ہوگی اور کسے نہیں ہوگی، کون جنت کی راہ پر لگے گا اور کون جہنم کی راہ پر۔