سورة الاعراف - آیت 175

وَاتْلُ عَلَيْهِمْ نَبَأَ الَّذِي آتَيْنَاهُ آيَاتِنَا فَانسَلَخَ مِنْهَا فَأَتْبَعَهُ الشَّيْطَانُ فَكَانَ مِنَ الْغَاوِينَ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

اور (اے پیغمبر) ان لوگوں کو اس آدمی کا حال (کلام الہی میں) پڑھ کر سناؤ جسے ہم نے اپنی نشانیاں دی تھی (یعنی دلائل حق کی سمجھ عطا کی تھی) لیکن پھر ایسا ہوا کہ اس نے (دانش و فہم کا) وہ جامہ اتار دیا۔ پس شیطان اس کے پیچھے لگا، نتیجہ یہ نکلا کہ گمراہوں میں سے ہوگیا۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(107) اس آیت کریمہ میں اللہ تعالیٰ نے ایک ایسے آدمی کی خبر دی ہے جسے اللہ نے آسمانی کتاب علم دیا تھا، جس کا تقاضا یہ تھا کہ وہ اس میں موجود دلائل وبراہین سے ستفادہ کر کے اللہ سے اپنا رشتہ استوار کرتا، اور اصلاح وتقوی کی زندگی اختیار کرتا، لیکن معاملہ برعکس رہا، اس نے دنیاعی عارضی مفاد کی خاطر اللہ کا انکار کردیا اور اس کی کتاب کو پس پشت ڈال دیا، اور دامن جھاڑ کر اس سے ایسا الگ ہوگیا جیسے کوئی سانپ اپنے چمڑے کے خول سے نکل کر باہر چلا جاتا ہے، اور جب وہ اس حال کو پہنچ دیا، اللہ تعالیٰ فرمایا کہ اگر ہم چاہتے تو اس آسمانی کتاب کی بدولت اسے اوج ثریا پر پہنچا تیے لیکن وہ اس کا اہل نہیں تھا، اس نے دنیاوی فائدوں کو تر جیح دیا اور اپنے نفس کا غلام بنارہا، اور دنیا اس کا منتہائے مقصود رہی کبھی قانع نہیں ہوا ایک فائدہ حاصل ہوا تو دوسرے کے پیچھے دوڑ نے لگا، اور اسی حصول دنیا میں حیران اوپریشان رہا اسے کبھی سکون نہ ملا اس کتے کی طرح جو ہر حال میں زبان نکالے ہانپتا رہتا ہے، چاہے وہ دوڑ رہا ہو یا بیٹھا ہو، تو جو شخص آسمانی کتاب کا علم رکھتے ہوئے اس ایمان وعمل صالح کا فائدہ نہیں اٹھاتا، اسے پس پشت ڈال دیتا ہے اور کفر کی راہ اختیار کرتا ہے اس کی مثال ہر دور میں سانپ کی ہے جو اپنے چمڑے کے خول سے نکل کر باہر چلا جاتا ہے اور اس کتے کی ہے جو ہر حال میں زبان نکالتے ہا نپت رہتا ہے۔ عبد اللہ بن مسعود (رض) کی روایت کے مطابق جسے امام شوکانی نے کتب احادیث کے دس حوالوں سے نقل کیا ہے یہ آیت بلعم بن عور کے بارے میں نازل ہوئی تھی جو موسیٰ (علیہ السلام) کے زمانے میں بنی اسرائیل کا ایک فرد تھا اور جو تورات کا علم رکھتا تھا، لیکن دنیاوی مصالح کی خاطر اس کا انکار کردیا اور کفر کی راہ اختیار کرلی۔ ایک دوسرا قول یہ ہے کہ یہ آیت میہ بن ابی الصلت کے بارے میں نازل ہوئی تھی جسے آسمانی کتابوں کا علم تھا اور جانتا تھا کہ عنقریب ہی ایک رسول آنے والا ہے اور امید کرتا تھا کہ وہ خود ہی رسول ہوگا اسی لیے جب نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) مبعوث ہوئے تو اس نے ایمان لانے سے انکار کردیا اور کفر کی حالت میں مرگیا۔ ایک تیسر قول یہ ہے کہ آیت ابو عامر کے بارے میں نازل ہوئی تھی جس نے زمانہ جاہلیت میں رہبا نیت کی زندگی اختیار کرلی تھی لیکن اسلام آنے کے بعد شام چلا گیا اور قیصر کو رسول اللہ (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے خلاف بھرکاتا رہا اور وہیں مرگیا، اسی نے منافقین کو مدینہ منورہ میں مسجد ضرار بنانے پر ابھارا تھا۔ بہر حال آیت کے نزول کا سبب جو بھی ہو اس کا حکم عام ہے اور اس میں بہت بڑی وعید ہے ان علمائے سو کے لیے جو دنیا کی عارضی لزتوں کی خاطر آخرت کو فراموش کردیتے ہیں، اور دنیاہی کے پیچھے لگ جاتے ہیں اللہ تعالیٰ تمام علمائے اسلام کو اس آیت کا مصداق بننے سے محفوظ رکھے۔