سورة الاعراف - آیت 167

وَإِذْ تَأَذَّنَ رَبُّكَ لَيَبْعَثَنَّ عَلَيْهِمْ إِلَىٰ يَوْمِ الْقِيَامَةِ مَن يَسُومُهُمْ سُوءَ الْعَذَابِ ۗ إِنَّ رَبَّكَ لَسَرِيعُ الْعِقَابِ ۖ وَإِنَّهُ لَغَفُورٌ رَّحِيمٌ

ترجمہ ترجمان القرآن - مولانا ابوالکلام آزاد

اور (اے پیغمبر) جب ایسا ہوا تھا کہ تیرے پروردگار نے اس بات کا اعلان کردیا تھا (اگر بنی اسرائیل شرارت و بدعملی سے باز نہ آئے تو) وہ قیامت کے دن کے تک ان پر ایسے لوگوں کو مسلط کردے گا جو انہیں ذلیل کرنے والے عذاب میں مبتلا کریں گے، حقیقت یہ ہے کہ تیرا پروردگار (بدعملی کی) سزا دینے میں دیر کرنے والا نہیں اور ساتھ ہی بخشنے والا رحمت والا بھی ہے۔

تفسیر تیسیر الرحمن لبیان القرآن - محمد لقمان سلفی صاحب

(100) سرکشی، اللہ کے اوامر کی مخالفت اور حیلہ کے ذریعہ حرام کو حلال بنانے کی وجہ سے اللہ تعالیٰ نے قیامت تک کے لیے ذلت ورسوائی بنی اسرائیل کی قسمت بنادی، اور یہ فیصلہ کردیا کہ دنیا کہ دوسری قومیں انہیں ہمیشہ ابتلاء وآزمائش اور طرح طرح کی مصیبتوں میں ڈالے رکھیں، گی کہا جاتا ہے، کہ سب سے پہلے خود موسیٰ (علیہ السلام) نے سات سال تک ان سے ٹیکس وصول کیا۔ سلیمان (علیہ السلام) کے بعد بابل کے بادشاہ بخت نصرنے ان کے ملک کو تہ وتاراج کردیا، مردوں کو قتل کیا اور عورتوں اور بچوں کو غلام بنا لیا، اور ان پر جزیہ نافذ کردیا، اور ان میں بہتوں کو بابل کی طرف جلاوطن کردیا، جہاں وہ ستر (70) سال تک بھٹکتے رہے، اس کے بعد بھی مختلف یونانی، کشدانی اور کامد انی بادشاہوں نے انہین اپنا غلام بنادیا اور ذلت ورسوائی کا یہ دور چلتا رہا، یہاں تک کہ عیسیٰ (علیہ السلام) کی ولادت کے اکہتر (71) سال بعد ان کے ملک پر رومانیوں کا قبضہ ہوگیا جنہوں نے انہیں وہاں سے نکال دیا، اور دنیا کے مختلف حصوں میں ذلیل وخوار بن کر تتربتر ہوگئے، ان دونوں جو ان کی بظاہر ایک حکومت سرزمین فلسطینی پر قائم ہوگئی ہے تو یہ قرآن کریم کی اس خبر کے خلاف نہیں ہے، بلکہ سورۃ آل عمراب کی آیت (112) کے مطابق امریکہ اور دیگر غیر مسلم حکومتوں کے بل بوتے پر قائم ہے، اگر یہ حکومتیں اپنا ہاتھ کھینچ لیں تو اسرائیلی حکومت باقی نہیں رہ سکے گی، اور اب بھی جو حکومت قائم ہے، اس میں اللہ کی کوئ مصلحت ہے، ورنہ ان کی ذلت کا عالم یہ ہے کہ یہودیوں کو وہاں ایک دن کے لیے بھی سکون حاصل نہیں ہے۔