سورة غافر - آیت 41

۞ وَيَا قَوْمِ مَا لِي أَدْعُوكُمْ إِلَى النَّجَاةِ وَتَدْعُونَنِي إِلَى النَّارِ

ترجمہ فہم القرآن - میاں محمد جمیل

اے قوم! آخر یہ کیا ماجرا ہے کہ میں تمہیں نجات کی طرف بلاتا ہوں اور تم مجھے آگ کی دعوت دیتے ہو

ابن کثیر - حافظ عماد الدین ابوالفداء ابن کثیر صاحب

عالم برزخ میں عذاب پر دلیل قوم فرعون کا مومن مرد اپنا وعظ جاری رکھتے ہوئے کہتا ہے کہ یہ کیا بات ہے کہ میں تمہیں توحید کی طرف یعنی اللہ وحدہ لاشریک لہ کی عبادت کی طرف بلا رہا ہوں ۔ میں تمہیں اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی تصدیق کرنے کی دعوت دے رہا ہوں ۔ اور تم مجھے کفر و شرک کی طرف بلا رہے ہو ؟ تم چاہتے ہو کہ میں جاہل بن جاؤں اور بے دلیل اللہ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے خلاف کروں ؟ غور کرو کہ تمہاری اور میری دعوت میں کس قدر فرق ہے ؟ میں تمہیں اس اللہ کی طرف لے جانا چاہتا ہوں جو بڑی عزت اور کبریائی والا ہے ۔ باوجود اس کے وہ ہر اس شخص کی توبہ قبول کرتا ہے جو اس کی طرف جھکے اور استغفار کرے ، لاجرم کے معنی حق و صداقت کے ہیں ، یعنی یہ یقینی سچ اور حق ہے کہ جس کی طرف تم مجھے بلا رہے ہو یعنی بتوں اور سوائے اللہ کے دوسروں کی عبادت کی طرف یہ تو وہ ہیں جنہیں دین و دنیا کا کوئی اختیار نہیں ۔ جنہیں نفع نقصان پر کوئی قابو نہیں جو اپنے پکارنے والے کی پکار کو سن سکیں تو قبول کر سکیں نہ یہاں نہ وہاں ۔ جیسے فرمان اللہ ہے «وَمَنْ اَضَلٰ مِمَّنْ یَّدْعُوْا مِنْ دُوْنِ اللّٰہِ مَنْ لَّا یَسْتَجِیْبُ لَہٗٓ اِلٰی یَوْمِ الْقِیٰمَۃِ وَہُمْ عَنْ دُعَاۗیِٕہِمْ غٰفِلُوْنَ وَإِذَا حُشِرَ النَّاسُ کَانُوا لَہُمْ أَعْدَاءً وَکَانُوا بِعِبَادَتِہِمْ کَافِرِینَ» ( 46- الأحقاف : 6 ، 5 ) ، یعنی اس سے بڑھ کر کوئی گمراہ نہیں جو اللہ کے سوا اوروں کو پکارتا ہے ۔ جو اس کی پکار کو قیامت تک سن نہیں سکتے ۔ جنہیں مطلق خبر نہیں کہ کون ہمیں پکار رہا ہے ؟ جو قیامت کے دن اپنے پکارنے والوں کے دشمن ہو جائیں گے اور ان کی عبادت سے بالکل انکار کر جائیں گے ۔ «إِن تَدْعُوہُمْ لَا یَسْمَعُوا دُعَاءَکُمْ وَلَوْ سَمِعُوا مَا اسْتَجَابُوا لَکُمْ» ( 35-فاطر : 14 ) گو تم انہیں پکارا کرو لیکن وہ نہیں سنتے ۔ اور بالفرض اگر سن بھی لیں تو قبول نہیں کر سکتے ۔ مومن آل فرعون کہتا ہے ۔ کہ ہم سب کو لوٹ کر اللہ ہی کے پاس جانا ہے ۔ وہاں ہر ایک کو اپنے اعمال کا بدلہ بھگتنا ہے ۔ وہاں حد سے گزر جانے والے اللہ کے ساتھ دوسروں کو شریک کرنے والے ہمیشہ کیلئے جہنم و اصل کر دیئے جائیں گے ، گو تم اس وقت میری باتوں کی قدر نہ کرو ۔ لیکن ابھی ابھی تمہیں معلوم ہو جائے گا میری باتوں کی صداقت و حقانیت تم پر واضح ہو جائے گی ۔ اس وقت ندامت حسرت اور افسوس کرو گے لیکن وہ محض بےسود ہو گا ۔ میں تو اپنا کام اللہ کے سپرد کرتا ہوں ۔ میرا توکل اسی کی ذات پر ہے ۔ میں تو اپنے ہر کام میں اسی سے مدد طلب کرتا ہوں ۔ مجھے تم سے کوئی واسطہ نہیں میں تم سے الگ ہوں اور تمہارے کاموں سے نفرت کرتا ہوں ۔ میرا تمہارا کوئی تعلق نہیں ۔ اللہ اپنے بندوں کے تمام حالات سے دانا بینا ہے ۔ مستحق ہدایت جو ہیں ان کی وہ رہنمائی کرے گا اور مستحقین ضلالت اس رہنمائی سے محروم رہیں گے ، اس کا ہر کام حکمت والا اور اس کی ہر تدبیر اچھائی والی ہے ۔ اس مومن کو اللہ تعالیٰ نے فرعونیوں کے مکر سے بچا لیا ۔ دنیا میں بھی وہ محفوظ رہا یعنی موسیٰ علیہ السلام کے ساتھ اس نے نجات پائی اور آخرت کے عذاب سے بھی محفوظ رہا ۔ باقی تمام فرعونی بدترین عذاب کا شکار ہوئے ۔ سب دریا میں ڈبو دیئے گئے ، پھر وہاں سے جہنم واصل کر دیئے گئے ۔ ہر صبح شام ان کی روحیں جہنم کے سامنے لائی جاتی ہیں ، قیامت تک یہ عذاب انہیں ہوتا رہے گا ۔ اور قیامت کے دن ان کی روحیں جسم سمیت جہنم میں ڈال دی جائیں گی ۔ اور اس دن ان سے کہا جائے گا کہ اے آل فرعون سخت درد ناک اور بہت زیادہ تکلیف دہ عذاب میں چلے جاؤ ۔ یہ آیت اہل سنت کے اس مذہب کی کہ عالم برزخ میں یعنی قبروں میں عذاب ہوتا ہے بہت بڑی دلیل ہے ، ہاں یہاں یہ بات یاد رکھنی چاہیئے ۔ کہ بعض احادیث میں کچھ ایسے مضامین وارد ہوئے ہیں جن سے معلوم ہوتا ہے کہ عذاب برزخ کا علم رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو مدینے شریف کی ہجرت کے بعد ہوا اور یہ آیت مکہ شریف میں نازل ہوئی ہے ۔ تو جواب اس کا یہ ہے کہ آیت سے صرف اتنا معلوم ہوتا ہے کہ مشرکوں کی روحیں صبح شام جہنم کے سامنے پیش کی جاتی ہیں ۔ باقی رہی بات کہ یہ عذاب ہر وقت جاری اور باقی رہتا ہے یا نہیں ؟ اور یہ بھی کہ آیا یہ عذاب صرف روح کو ہی ہوتا ہے یا جسم کو بھی اس کا علم اللہ کی طرف سے آپ کو مدینے شریف میں کرایا گیا ۔ اور آپ نے اسے بیان فرما دیا ۔ پس حدیث و قرآن ملا کر مسئلہ یہ ہوا کہ عذاب و ثواب قبر ، روح اور جسم دونوں کو ہوتا ہے اور یہی حق ہے ۔ اب ان احادیث کو ملاحظہ فرمائیے ۔ مسند احمد میں ہے کہ ایک یہودیہ عورت سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کی خدمت گزار تھی ۔ سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا جب کبھی اس کے ساتھ کچھ سلوک کرتی تو وہ دعا دیتی اور کہتی اللہ تجھے جہنم کے عذاب سے بچائے ۔ ایک روز سیدہ صدیقہ رضی اللہ عنہا نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کیا قیامت سے پہلے قبر میں بھی عذاب ہوتا ہے ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا نہیں تو یہ کس نے کہا ؟ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا نے اس یہودیہ عورت کا واقعہ بیان کیا تو آپ نے فرمایا یہود جھوٹے ہیں ۔ اور وہ تو اس سے زیادہ جھوٹ اللہ پر باندھا کرتے ہیں ۔ قیامت سے پہلے کوئی عذاب نہیں ۔ کچھ ہی دن گزرے تھے کہ ایک مرتبہ ظہر کے وقت کپڑا لپیٹے ہوئے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم تشریف لائے آنکھیں سرخ ہو رہی تھیں اور باآواز بلند فرما رہے تھے قبر مانند سیاہ رات کی اندھیریوں کے ٹکڑوں کے ہے ۔ لوگو اگر تم وہ جانتے جو میں جانتا ہوں تو بہت زیادہ روتے اور بہت کم ہنستے ، لوگو ! قبر کے عذاب سے اللہ کی پناہ طلب کرو ، یقین مانو کہ عذاب قبر حق ہے ۔ (مسند احمد:81/6:صحیح) اور روایت میں ہے کہ ایک یہودیہ عورت نے سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا سے کچھ مانگا جو آپ رضی اللہ عنہا نے دیا اور اس نے وہ دعا دی اس کے آخر میں ہے کہ کچھ دنوں بعد نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا مجھے وحی کی گئی ہے کہ تمہاری آزمائش قبروں میں کی جاتی ہے ۔(مسند احمد:238/6:صحیح) پس ان احادیث اور آیت میں ایک تطبیق تو وہ ہے جو اوپر بیان ہوئی ۔ دوسری تطبیق یہ بھی ہو سکتی ہے کہ آیت «النَّارُ یُعْرَضُونَ» ( الغافر : 46 ) سے صرف اس قدر ثابت ہوتا ہے کہ کفار کو عالم برزخ میں عذاب ہوتا ہے ۔ لیکن اس سے یہ لازم نہیں آتا کہ مومن کو یہاں کے بعض گناہوں کی وجہ سے اس کی قبر میں عذاب ہوتا ہے ۔ یہ صرف حدیث شریف سے ثابت ہوا ۔ مسند احمد میں ہے کہ سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کے پاس ایک دن رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم آئے اس وقت ایک یہودیہ عورت مائی صاحبہ کے پاس بیٹھی تھی اور کہہ رہی تھی کہ کیا آپ کو معلوم ہے کہ تم لوگ اپنی قبروں میں آزمائے جاؤ گے ؟ اسے سن کر نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کانپ گئے اور فرمایا یہود ہی آزمائے جاتے ہیں ۔ پھر چند دنوں بعد آپ نے فرمایا لوگو تم سب قبروں کے فتنہ میں ڈالے جاؤ گے ۔ اس کے بعد نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم فتنہ قبر سے پناہ مانگا کرتے تھے ۔ (صحیح مسلم:584) یہ بھی ہو سکتا ہے کہ آپ سے صرف روح کے عذاب کا ثبوت ملتا تھا ۔ اس سے جسم تک اس عذاب کے پہنچنے کا ثبوت نہیں تھا ۔ بعد میں بذریعہ وحی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کو یہ معلوم کرایا گیا کہ عذاب قبر جسم و روح کو ہوتا ہے ۔ چنانچہ آپ نے پھر اس سے بچاؤ کی دعا شروع کی ، واللہ سبحانہ و تعالیٰ اعلم۔ ۔ صحیح بخاری شریف میں ہے کہ سیدہ عائشہ رضی اللہ عنہا کے پاس ایک یہودیہ عورت آئی اور اس نے کہا عذاب قبر سے ہم اللہ کی پناہ چاہتے ہیں اس پر سیدہ صدیقہ رضی اللہ عنہا نے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم سے سوال کیا کہ کیا قبر میں عذاب ہوتا ہے ؟ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا ہاں عذاب قبر برحق ہے فرماتی ہیں اس کے بعد میں نے دیکھا کہ نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ہر نماز کے بعد عذاب قبر سے پناہ مانگا کرتے تھے ۔(صحیح بخاری:1372) اس حدیث سے تو ثابت ہوتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اسے سنتے ہی یہودیہ عورت کی تصدیق کی ۔ اور اوپر والی احادیث سے معلوم ہوتا ہے کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے تکذیب کی تھی ۔ دونوں میں تطبیق یہ ہے کہ یہ دو واقعے ہیں پہلے واقعے کے وقت چونکہ وحی سے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کو معلوم نہیں ہوا تھا آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے انکار فرما دیا ۔ پھر معلوم ہو گیا تو آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے اقرار کیا ، واللہ سبحان و تعالیٰ اعلم ۔ قبر کے عذاب کا ذکر بہت سی صحیح احادیث میں آ چکا ہے ۔ واللہ اعلم ۔ حضرت قتادہ رحمہ اللہ فرماتے ہیں رہتی دنیا تک ہر صبح شام آل فرعون کی روحیں جہنم کے سامنے لائی جاتی ہیں اور ان سے کہا جاتا ہے کہ بدکارو تمہاری اصلی جگہ یہی ہے تاکہ ان کے رنج و غم بڑھیں ان کی ذلت و توہین ہو ۔ پس آج بھی وہ عذاب میں ہی ہیں ۔ اور ہمیشہ اسی میں رہیں گے ۔ ابن ابی حاتم میں سیدنا عبداللہ بن مسعود رضی اللہ عنہ کا قول ہے کہ شہیدوں کی روحیں سبز رنگ کے پرندوں کے قالب میں ہیں وہ جنت میں جہاں کہیں چاہیں چلتی پھرتی ہیں ۔ اور مومنوں کے بچوں کی روحیں چڑیوں کے قالب میں ہیں اور جہاں وہ چاہیں جنت میں چلتی رہتی ہیں ۔ اور عرش تلے کی قندیلوں میں آرام حاصل کرتی ہیں ۔ اور آل فرعون کی روحیں سیاہ رنگ پرندوں کے قالب میں ہیں ۔ صبح بھی جہنم کے پاس جاتی ہیں ۔ اور شام کو بھی یہی ان کا پیش ہونا ہے ۔ معراج والی لمبی روایت میں ہے کہ پھر مجھے ایک بہت بڑی مخلوق کی طرف لے چلے جن میں سے ہر ایک کا پیٹ مثل بہت بڑے گھر کے تھا ۔ جو آل فرعون کے پاس قید تھے ۔ اور آل فرعون صبح شام آگ پر لائے جاتے ہیں ۔ اور جس دن قیامت قائم ہو گی اللہ تعالیٰ فرمائے گا ۔ ان فرعونیوں کو سخت تر عذابوں میں لے جاؤ اور یہ فرعونی لوگ نکیل والے اونٹوں کی طرح منہ نیچے کئے پتھر اور درخت پر چڑھ رہے ہیں اور بالکل بےعقل و شعور ہیں ۔(ضعیف) ابن ابی حاتم میں ہے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ جو احسان کرے خواہ مسلم ہو خواہ کافر اللہ تعالیٰ اسے ضرور بدلہ دیتا ہے ہم نے پوچھا یا رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کافر کو کیا بدلہ ملتا ہے ؟ فرمایا اگر اس نے صلہ رحمی کی ہے یا صدقہ دیا ہے اور کوئی اچھا کام کیا ہے تو اللہ تعالیٰ اس کا بدلہ اس کے مال میں اس کی اولاد میں اس کی صحت میں اور ایسی ہی اور چیزوں میں عطا فرماتا ہے ۔ ہم نے پھر پوچھا اور آخرت میں کیا ملتا ہے ؟ فرمایا بڑے درجے سے کم درجے کا عذاب پھر آپ نے«اَدْخِلُوْٓا اٰلَ فِرْعَوْنَ اَشَدَّ الْعَذَابِ» ( 40- غافر : 46 ) ، پڑھی۔(مسند بزار:945:ضعیف) ۔ ابن جریر میں ہے کہ حضرت اوزاعی رحمہ اللہ سے ایک شخص نے پوچھا کہ ذرا ہمیں یہ بتاؤ ہم دیکھتے ہیں کہ بہت سے مفید پرندوں کا غول کا غول سمندر سے نکلتا ہے اور اس کے مغربی کنارے اڑتا ہوا ، صبح کے وقت جاتا ہے ۔ اس قدر زیادتی کے ساتھ کہ ان کی تعداد کوئی گن نہیں سکتا ۔ شام کے وقت ایسا ہی جھنڈ کا جھنڈ واپس آتا ہے لیکن اس وقت ان کے رنگ بالکل سیاہ ہوتے ہیں آپ نے فرمایا تم نے اسے خوب معلوم کر لیا ۔ ان پرندوں کے قالب میں آل فرعون کی روحیں ہیں ۔ جو صبح شام آگ کے سامنے پیش کی جاتی ہیں پھر اپنے گھونسلوں کی طرف لوٹ جاتی ہیں ان کے پر جل گئے ہوئے ہوتے ہیں اور یہ سیاہ ہو جاتے ہیں ۔ پھر رات کو وہ اگ جاتے ہیں اور سیاہ جھڑ جاتے ہیں ۔ پھر وہ اپنے گھونسلوں کی طرف لوٹ جاتے ہیں یہی حالت ان کی دنیا میں ہے اور قیامت کے دن ان سے اللہ تعالیٰ فرمائے گا اس آل فرعون کو سخت عذابوں میں داخل کر دو کہتے ہیں کہ ان کی تعداد چھ لاکھ کی ہے جو فرعونی فوج تھی ۔ مسند احمد میں ہے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم فرماتے ہیں کہ تم میں سے جب کبھی کوئی مرتا ہے ہر صبح شام اس کی جگہ اس کے سامنے پیش کی جاتی ہے اگر وہ جنتی ہے تو جنت ۔ اور اگر وہ جہنمی ہے تو جہنم اور کہا جاتا ہے کہ تیری اصل جگہ یہ ہے جہاں تجھے اللہ تعالیٰ قیامت کے دن بھیجے گا ۔ (صحیح بخاری:1379) یہ حدیث صحیح بخاری مسلم میں بھی ہے ۔