کتاب: سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ شخصیت اور کارنامے - صفحہ 114
اسے مجھے فروخت کردو۔ چنانچہ آپؓ نے اسے رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کو فروخت کردیا۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: اے عبداللہ بن عمر! یہ تمہارے لیے ہے جس طرح چاہو اسے استعمال کرو۔  ۱۱۔ ابن عمر رضی اللہ عنہما کی ہمت افزائی اور ابن مسعود رضی اللہ عنہ کو بشارت: عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما سے روایت ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: (( إِنَّ مِنَ الشَّجَرِ شَجَرَۃً لَا یَسْقُطُ وَرَقُہَا وَہِیَ مَثَلُ الْمُسْلِمِ، حَدِّثُوْنِیْ مَا ہِیَّ؟۔)) ’’درختوں میں ایک ایسا درخت ہے جس کے پتے کبھی نہیں جھڑتے، اور یہی مسلمان کی مثال ہے۔ بتاؤ یہ کون سا درخت ہے؟‘‘ لوگ جنگل کے درختوں کے بارے میں سوچنے لگے۔ میرے دل میں خیال آیا کہ یہ کھجور کا درخت ہے، لیکن میں شرم سے نہ بولا۔ صحابہ نے کہا: اے اللہ کے رسول! اس درخت کے بارے میں ہمیں بتا دیجیے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: یہ کھجور کا درخت ہے۔ عبداللہ بن عمر رضی اللہ عنہما کا بیان ہے کہ میں نے اپنا خیال اپنے والد کو بتایا تو انہوں نے کہا: تمہارا اسے بتا دینا میرے نزدیک اس بات سے کہیں زیادہ بہتر تھا کہ میرے پاس ایسا ایسا (قیمتی سرمایہ) ہوتا۔‘‘  عمر رضی اللہ عنہ کا ابن مسعود رضی اللہ عنہ کو خوشخبری دینے کا واقعہ یوں ہے: عمر رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ انہوں نے ابوبکر رضی اللہ عنہ کے گھر میں نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ مسلمانوں کے معاملات کے بارے میں رات دیر تک گفتگو کی۔ پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نکلے اور ہم بھی آپ کے ساتھ نکلے، ہم نے دیکھا کہ ایک آدمی مسجد میں نماز پڑھ رہا ہے۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم کھڑے ہو کر اس کی قراء ت سننے لگے۔ قریب تھا کہ ہم اسے پہچان لیتے، اتنے میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: (( مَنْ سَرَّہُ أَنْ یَقْرَأ الْقُرْآنَ رَطْبًاکَمَاأُنْزِلَ فَلْیَقْرَأْہُ عَلٰی قِرَائَ ۃِ ابْنِ أُمِّ عَبْدٍ۔)) ’’جو قرآن کو تروتازہ پڑھنا چاہے جس طرح کہ اس کا نزول ہوا، تو وہ اسے ابن ام عبد کی قرائت پر پڑھے۔‘‘ پھر وہ آدمی بیٹھ کر دعائیں کرنے لگا۔ اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم اس کے لیے فرمانے لگے: (( سَلْ تُعْطَہٗ سَلْ تُعْطَہٗ۔)) ’’تو مانگ لے تجھے دیا جائے گا، تو مانگ لے تجھے دیا جائے گا۔‘‘ عمر رضی اللہ عنہ کا بیان ہے کہ میں نے سوچا، اللہ کی قسم میں صبح سویرے اس کے پاس جاؤں گا اور اسے خوشخبری دوں گا