کتاب: قائلین و فائلین رفع الیدین مسائل و احکام،دلائل و تحقیق - صفحہ 9
التِّرْمِذِيُّ عَنْ مَالِکٍ غَیْرَہٗ )۔ ’’ابن القاسم ؒ کے سوا ان دونوں مواقع ( قبل از رکوع و بعد از رکوع ) پر امام مالک ؒ سے کسی نے ترک ِ رفع یدین نقل نہیں کی۔اور ہم تو حضرت ابن ِعمررضی اللہ عنہما کی حدیث کے بموجب رفع یدین کرنے کو ہی اختیار کرتے ہیں۔اور وہب ؒ وغیرہ نے امام مالکؒ سے یہی بیان کیا ہے،اور امام ترمذی نے تو امام مالک سے رفع یدین کرنے کے سوا دوسرا کوئی قول نقل ہی نہیں کیا۔‘‘ آگے چل کر وہ لکھتے ہیں کہ امام خطابی ؒ نے معالم السنن میں اور امام قرطبی ؒ نے المفہم میں لکھا ہے کہ رکوع سے قبل اور رکوع کے بعد رفع یدین کرنا ہی امام مالک ؒ کاآخری اور صحیح تر قول ہے۔ قائلین ِ رفع یدین کے دلائل ( احادیث ِ نبویہ صلی اللہ علیہ وسلم ) اب آئیے قائلین ِ رفع یدین کے دلائل کا مطالعہ کریں۔ پہلی د لیل : صحیح بخاری ومسلم،سنن ِ اربعہ،صحیح ابن حبان،ابن خزیمہ،صحیح ابی عوانہ،مؤطا امام مالک،محلّی ابن حزم،مصنف عبد الرزاق،ابن ابی شیبہ،مسنداحمد و شافعی و حمیدی،شرح السنہ بغوی،دارمی،دار قطنی،سنن کبریٰ بیہقی،اور جزء رفع الیدین امام بخاری بلکہ تمام ہی کتب ِ حدیث میں مختلف طُرق سے حضرت عبد اللہ بن