کتاب: قائلین و فائلین رفع الیدین مسائل و احکام،دلائل و تحقیق - صفحہ 63
یَسْتَثْنِیَا أَحَداً مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صلي اللّٰه عليه وسلم دُوْنَ أَحَدٍ))۔  ‘’نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ رضی اللہ عنہم رفع یدین کیا کرتے تھے اور انھوں نے بھی کسی ایک بھی صحابی کو اس سے مستثنیٰ نہیں کیا۔‘‘ ایک جگہ امام بخاری ؒفرماتے ہیں : ( وَ لَمْ یَثْبُتْ عَنْ أَحَدٍ مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صلي اللّٰه عليه وسلم أَنَّہٗ لاَ یَرْفَعُ یَدَیْہِ وَلَیْسَ أَسَانِیْدُہٗ أَصَحُّ مِنْ رَفْعِ الأَیْدِيْ )۔  ‘’نبی صلی اللہ علیہ وسلم کے صحابہ میں سے کسی ایک بھی صحابی سے یہ ثابت نہیں ہے کہ وہ رفع یدین نہ کرتا ہو،اور ان کی اسانید رفع یدین کرنے کا پتہ دینے والے آثار سے زیادہ صحیح نہیں ہیں۔‘‘ ایک دوسری جگہ امام بخاری ؒ لکھتے ہیں : ( وَلَمْ یَثْبُتْ عِنْدَ أَہْلِ النَّظَرِ مِمَّنْ أَدْرَکْنَا مِنْ أَہْلِ الْحِجَازِوَأَہْلِ الْعِرَاقِ مِنْہُمْ عَبْدُاللّٰہِ وَعَلِيُّ بْنُ عَبْدِ اللّٰہِ بْنِ جَعْفَرَوَیَحْیٰ بْنُ مُعِیْنٍ وَ أَحْمَدُ بْنُ حَنْبَل ٍ وَاِسْحَاقُ بْنُ رَاہْوَیْہِ ہٰؤُلٓائِ أَہْلُ الْعِلْمِ مِنْ بَیْنِ أَہْلِ زَمَانِہِمْ فَلَمْ یَثْبُتْ عِنْدَ أَحَدٍ مِّنْہُمْ عِلْمٌ فِيْ تَرْکِ رَفْعِ الأَیْدِيْ عَنِ النَّبِيِّ صلي اللّٰه عليه وسلم وَلَا عَنْ أَحَدٍ مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صلي اللّٰه عليه وسلم أَ نَّہٗ لَمْ یَرْفَعْ یَدَیْہِ)۔  ’’حجاز و عراق کے وہ اہل ِ نظر علماء جنہیں ہم نے پایا ہے،جن میں سے ہی عبداللہ،علی بن عبد اللہ بن جعفر،یحیٰ بن معین،احمد بن حنبل اور