کتاب: قائلین و فائلین رفع الیدین مسائل و احکام،دلائل و تحقیق - صفحہ 30
اُن صحابہ رضی اللہ عنہم نے کہا : کیوں؟جبکہ نہ تو آپ ہم سے پہلے مشرّف بہ اسلام ہوئے،اور نہ ہی ہم سے زیادہ ملازم ِ صحبت رہے؟انھوں نے فرمایا : ہاں،میں زیادہ جانتا ہوں،صحابہ رضی اللہ عنہم نے پوچھا : کیسے؟ تو انھوں نے جواب دیا : (( اِتَّبَعْتُ ذٰلِکَ مِنْہُ حَتّٰی حَفِظْتُہٗ ))۔  ’’میں نے آپ صلی اللہ علیہ وسلم کی نماز پر خاص دھیان دیا،یہاں تک کہ میں نے اسے خوب حفظ کرلیا۔‘‘ تب صحابہ رضی اللہ عنہم نے انہیں کہا : اچھا تو نماز ِنبوی صلی اللہ علیہ وسلم پیش کرو،اس پر انھوں نے فرمایا : (( کَانَ رَسُوْلُ اللّٰہِ صلي اللّٰه عليه وسلم اِذَا قَامَ اِلٰی الصَّلوٰۃِ یَرْفَعُ یَدَیْہِ حَتّٰی یُحَاذِيَ بِھِمَا مَنْکِبَیْہِ،ثُمَّ یُکَبِّرُ حَتّٰی یَقِرَّ کُلُّ عَظْمٍ فِيْ مَوْضِعِہٖ مُعْتَدِلاً ثُمَّ یَقْرَأُ،ثُمَّ یُکَبِّرُ فَیَرْفَعُ یَدَیْہِ حَتّٰی یُحَاذِيَ بِھِمَا مَنْکِبَیْہِ،ثُمَّ یَرْکَعُ وَیَضَعُ رَاحَتَیْہِ عَلٰی رُکْبَتَیْہِ،ثُمَّ یَعْتَدِلُ فَلَا یُصَوِّبُ رَأْسَہٗ وَلَا یُقْنِعُ ثُمَّ یَرْفَعُ رَأْسَہٗ فَیَقُوْلُ:( سَمِعَ اللّٰہُ لِمَنْ حَمِدَہٗ )۔ثُمَّ یَرْفَعُ یَدَیْہِ حَتّٰی یُحَاذِيَ بِھِمَا مَنْکِبَیْہِ مُعْتَدِلاً …الخ،ثُمَّ اِذَا قَامَ مِنَ الرَّکْعَتَیْنِ کَبَّرَ وَ رَفَعَ یَدَیْہِ حَتّٰی یُحَاذِيَ بِھِمَا مَنْکِبَیْہِ کَمَا کَبَّرَ عِنْدَ الْاِفْتِتَاحِ …الخ ))۔ ‘’نبی صلی اللہ علیہ وسلم جب نماز کے لیٔے کھڑے ہوتے تو رفع یدین کرتے،یہاں تک کہ دونوں ہاتھ کندھوں کے برابرہوجاتے،پھر تکبیر کہتے اور سیدھے کھڑے ہوتے،یہاں تک کہ جسم کی تمام ہڈیاں اپنی اپنی جگہ