کتاب: دعوت دین کِسے دیں؟ - صفحہ 67
قَدَمَيَّ، وَأَنَا الْعَاقِبُ۔‘‘ [’’میرے پانچ نام ہیں: میں محمد صلی اللہ علیہ وسلم ہوں، میں احمد ہوں، میں [الماحی] ہوں کہ اللہ تعالیٰ میرے ساتھ کفر کو مٹاتے ہیں، میں [الحاشر] ہوں، کہ لوگ میرے پیچھے اٹھائے جائیں گے اور میں [العاقب] ہوں۔‘‘ اور صحیح مسلم کی روایت میں ہے: ’’اور [العاقب] وہ ہیں، کہ ان کے بعد نبی نہیں۔‘‘ اس حدیث شریف میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے اس بات کی خبر دی ہے، کہ آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے اسمائے مبارکہ میں ایک اسم گرامی [العاقب] ہے، اور العاقب سے مراد… جیسا کہ صحیح مسلم کی روایت میں ہے… وہ ہیں، کہ ان کے بعد کوئی نبی نہیں۔ ج: امام مسلم نے حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے روایت نقل کی ہے، کہ بے شک رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ’’فُضِّلْتُ عَلَی الْأَنْبِیَائِ بِسِتٍّ: أُعْطِیْتُ جَوَامِعَ الْکَلَمِ، وَنُصِرْتُ بِالرُّعْبِ، وَأُحِلَّتْ لِيَ الْغَنَائِمُ، وَجُعِلَتْ لِيَ الْأَرْضُ طَہُوْرًا وَمَسْجِدًا، وَأُرْسِلْتُ إِلَی الْخَلْقِ کَافَّۃً، وَخُتِمَ بِيَ النَّبِیُّوْنَ۔‘‘ [’’مجھے انبیاء پر چھ (چیزوں) کے ساتھ فضیلت دی گئی ہے: مجھے جامع کلمات دیے گئے، رعب کے ساتھ میری نصرت کی گئی، میرے لیے