کتاب: آداب دعا - صفحہ 14
دعاء کے بارے میں حکمِ الٰہی ہے : سورۂ مؤمن ،آیت:۶۰ میں ارشادِ الٰہی ہے : { قَالَ رَبُّکُمُ ادْعُوْنِیْ اَسْتَجِبْ لَکُمْ اِنَّ الَّذِیْنَ یَسْتَکْبِرُوْنَ عَنْ عِبَادَتِیْ سَیَدْخُلُوْنَ جَہَنَّمَ د اخِرِیْنَ } ۔ ’’ تمہارے پرور دگار نے کہا ہے : مجھے پکارو ، میں تمہاری پکار و دُعاء کو سُنتا ہوں ، بیشک جو لوگ میری عبادت ( دُعاء کرنے) سے تکبّر اختیار کرتے ہیں عنقریب وہ ذلیل ہو کر جہنّم میں داخل ہوں گے ۔‘‘ اس آیت میں مالکِ ارض وسماء نے امّتِ محمّدیہ[ علـٰـی صاحبہا الصلـٰوۃ و السلام ]کو اس خاص شرف واعزاز سے نوازا ہے کہ انہیں صرف دُعاء وفریاد کا حکم ہی نہیں دیا ، بلکہ { اَسْتَجِبْ لَکُمْ} کہہ کر ان سے اجابت و قبولیّت کاوعدہ بھی فرمایا گیا ہے ۔ اور ایک دوسری جگہ سورۂ اعراف،آیت:۵۵ میں ارشادِ الٰہی ہے : { اُدْعُوْا رَبَّکُمْ تَضَرُّعاً وَّ خُفْیَۃً اِنَّہٗ لَا یُحِبُّ الْمُعْتَدِیْنَ } ۔ ’’ اپنے پرور دگار کو گِڑگِڑا کر اور خفیہ طریقہ سے پکارو ، بیشک وہ زیادتی(حد سے تجاوز ) کرنے والوں پسند نہیں فرماتا ۔‘‘ سورۂ بقرۃ،آیت:۱۸۶ میں اللہ تعالیٰ نے فرمایا ہے : { وَاِذَا سَأَلَکَ عِبَادِیْ عَنِّیْ فَاِنِّیْ قَرِیْبٌ اُجِیْبُ دَعْوَۃَ الدَّاعِ اِذَا دَعَانِ فَلْیَسْتَجِیْبُوْا لِیْ وَلْیُؤْمِنُوْا بِیْ لَعَلَّہُمْ یَرْشُدُوْنَ } ۔ ’’ اور جب میرے بندے آپ( صلی اللہ علیہ وسلم ) سے میرے بارے میں پوچھیں